جج

انسان ایک مکمل پیکج ہوتا ہے ‘ اس میں خوبیاں بھی ہوتی ہیں خامیاں بھی ‘ اور اگر ہم کسی کو اس کے ویکیسٹ لِنک (Weakest Link) سے جج کرتے ہیں تو ہم بہت برے جج بن جاتے ہیں۔

#Haalim_Novel

Advertisements

پیغام قرآن

#پیغام_قرآن
Quran’s Lesson – Surah Al-Isra 17, Verse 57, Part 15

جنہیں یہ لوگ پکارتے ہیں وہ تو خود اپنے پروردگار کی طرف وسیلہ تلاش کرتے ہیں کہ کوئی اس سے قریب تر ہوجائے۔ وہ اس کی رحمت کے امیدوار رہتے ہیں اور اس کے عذاب سے ڈرتے ہیں۔ بلاشبہ آپ کے پروردگار کا عذاب ڈرنے کی چیز ہے۔

نئے اور پرانے گدھے

Image result for donkey

نئے اور پرانے گدھے

ابو یحییٰ

انسانوں نے جب متمدن زندگی کا آغاز کیا تو جنگل کے جن باسیوں نے انسانوں کا بھرپور ساتھ دیا ان میں گدھے کا نام بہت نمایاں ہے ۔ انسانی فطرت پر یہ راز اول دن سے آشکارا تھا کہ یہ معصوم اور بے ضر ر جانور باربرداری کے لیے بہترین ذریعہ ہے ۔ چنانچہ تہذیب کی تعمیر اور تمدن کی ترقی میں گدھے کی سامان ڈھونے کی صلاحیت انسان کی بہترین معاون ثابت ہوئی اور مشینوں کے پھیلاؤ سے پہلے تک انسان اور ان کے سامان کو ڈھوکر گدھا تمدن کی تعمیر اور اس کے بقا و استحکام کا ایک اہم ترین حصہ رہا ہے ۔ تاہم باربرداری کے غیر معمولی وصف کے باوجود گدھا انسانوں کے ہاں ’گدھا‘ ہی سمجھا جاتا ہے اور بے جا ہٹ دھرمی اور بے وقوفی کے استعارے کے طور پر اس کا نام استعمال ہوتا ہے ۔

بے وقوفی کی تعبیر کے لیے گدھے کے استعارے کا پس منظر تو معلوم نہیں ، لیکن قیاس یہ ہے کہ اس کی وجہ یہ ہے کہ گدھا انسانوں کے انتہائی قرب کے باوجود بعض دیگر جانوروں کی طرح تربیت یافتہ نہ ہو سکا۔ وہ ہزاروں برس تک انسانوں کے ساتھ رہ کر بس ایک ڈھونے والا رہا، سمجھنے والا نہ بن سکا۔ وہ کبھی نہ جان سکا کہ کیسی قیمتی اور اہم اشیا ہیں ، جنھیں وہ ڈھوتا ہے ۔ قرآن مجید (جمعہ5:62) کے مطابق گدھے کی یہی مثال ان لوگوں کی ہے جو کتابِ الٰہی جیسی عظیم نعمت کے حامل ہوں ، مگر وہ اس نعمت کو پا کر معرفت، تقویٰ اور حکمت پیدا کرنے کے بجائے فخر اور کفر اور غفلت میں مبتلا ہوجائیں ۔

قرآن سے معلوم ہوتا ہے کہ ہر وہ گروہ گدھے جیسا ہے جو کتاب اللہ کو پائے اور اس کی ذمہ داریوں کو نہ اٹھائے ۔ وہ اسے سمجھے نہ اسے سیکھے ، وہ اس کا علم ہو نہ اس کا عمل، وہ اس کی سیرت ہو نہ اس کا اخلاق۔ یہ گدھے حق کو جھٹلاتے ہیں ، مگر خود کو حق کا سب سے بڑ ا نمائندہ کہتے ہیں ۔ یہ گدھے حاملِ کتاب ہونے پر فخر کرتے ہیں ، مگر اس کا پیغام دوسروں تک نہیں پہنچاتے ۔
پہلے یہ گدھے تورات ڈھوتے تھے اور آج کل قرآن ڈھوتے ہیں ۔ مگر خدا کے نزدیک اس رویے کے مرتکبین کچھ بھی ڈھوئیں ، وہ گدھے کے گدھے ہی رہتے ہیں ۔