~!~ Mere Kuch Lafz Aise Hon ~~

Mere kuch lafz aise hon
Jo apni band aankhon se tere dil ki
Har ik tehreer parhtey hon
Woh hon to lafz lekin
Woh ik taqdeer rakhtey hon
Kabhi jo rooth jaou tum
Na mujh se maan paou tum
To tum ko mananey ki
Woh har tadbeer rakhtey hon
Mere kuch lafz aise hon
Advertisements

~!~ Qusoor Kiya ~!~

Yeh jo be rukhi hain baja nahi
Yeh adayen kyun yeh ghuroor kiya
Yeh guraiz kis liye is qadar
Yeh khafa khafa se huzoor kiya
Tujhey yaad karna mazaaq tha
Tujhey bhool jana azaab hai
Yeh saza hai jurm-e-firaaq ki
Mere haafzey ka qusoor kiya
Tere saath hai jo teri ana
Mere saath mera naseeb hai
Mujhey tujh se kaisi shikayatain
Tujhey khud pe itna ghuroor kiya
Koi khwab tha ke saraab tha
Jo guzar gaya so guzar gaya
Yeh baseeraton ka qusoor kyun
Yeh basaaraton ka fatoor kiya
Yeh tumhara chehra kitaab hai
Isey parh raha hoon waraq waraq
Zara baat saada likha karo
Yeh mahawraon ki satoor kiya
Dil-e-khud pasand sada na de
Ke yeh ik sadaoun ka dasht hai
Kahin kho gaye hain jo bheer main
Hamain dhoondna hai zaroor kiya
Sabhi phool tere naseeb main
Sabhi khaar mere hisaab main
Yeh jaza saza ka tlism hai
Mera tera is main qusoor kiya

~!~ Teri Khushboo ~!~


یہ دل روشن ہے تیری روشنی سے
سراپا ان چراغوں کا تجھے حیرت سے تکتا ہے
میری ویران حسرت کو وہی آباد کرتا ہے
جو سایہ ساتھ رکھتا ہے، جو وعدے کو نبھاتا ہے
محبت فرض اُن پر ہے جنہیں سونا نہیں آتا
یہ حکمت اُن پہ واجب ہے جنہیں رونا نہیں اتا
کسی تاریک گوشے میں، کہیں شعلہ بھڑکتا ہے
پُجاری کی عقیدت سے خدا کا دل دھڑکتا ہے
جہاں میں خواہشوں کے پھل تیری پہلی نظر سے ہیں
نفس کی کاوشوں کے پھل تیری پہلی نظر سے ہیں
وفاداری غلامی ہے، یہ مجھ کو راس آتی ہے
ندامت کی اک ادا سے دل کو میرے کھینچ لاتی ہے
مقدس تیرگی میں بس تجھے محسوس کرتا ہوں
میں ہر پل روشنی میں بس تجھے محسوس کرتا ہوں
مجھے معذور خوابوں سے یہی بیدار کرتی ہے
سوا تیرے ہر اک شے بس مجھے بے زار کرتی ہے
مجھے مسرور کرتی ہے، میری تلخی بُھلاتی ہے
میرے محبوب موسم کو میرا اپنا بناتی ہے
یہ اُڑتی بادلوں میں اور کبھی اطراف پھرتی ہے
میرے اندر کی چنگاری فروزاں کرتی رہتی ہے
عجب انصاف کرتی ہے، مُجھے عادل بناتی ہے
تیری خوشبو مجھے سرشار رکھتی ہے

(سہیل احمد )

~!~ Zindagi Main ~!~

ذندگی میں اکثر۔۔
 
 

ذندگی میں اکثر
ان ہوائوں کی دستکوں میں
ان رنگ بھرتی شاموں میں
ہمیں آزمائشوں سے گزرنا پڑتا ہے
ذندگی میں اکثر
ان حسین موسموں میں
ان دلکش خوابوں کی دُنیا میں
ان گُزرتے ہوئے لمحوں میں
ہمیں حسیں خوابوں کو بھولنا پڑتا ہے
ذندگی میں اکثر
اس نفرتوں اور محبتوں کی دنیا میں
ان بے لوث چاہتوں میں
ان اُمنگوں اور آرزوئوں میں
ہمیں پیار بھی کرنا پڑتا ہے
ذندگی میں اکثر
ان خواہشوں کے سمندروں میں
ان اُلفتوں کے بے آب دریا میں
ذندگی میں اپنا مقام بنانا پڑتا ہے
ذندگی میں اکثر
ہمیں محبتیں بھی ہوتی ہیں
ہمیں نفرتیں بھی ہوتی ہیں
دل میں نئی خواہشیں جنم لیتی ہیں
اور پھر صدفؔ ہمیں ذندگی حسین لگتی ہے

~!~ Meri Aadhi Umr ~!~


آدھی عمر۔۔۔

یونہی بے یقیں یونہی بے نشاں میری آدھی عمر گزر گئی
کہیں ہو نہ جائوں میں رائیگاں، میری آدھی عمر گزر گئی

کبھی سائبان نہ تھا بہم، کبھی کہکشاں تھی قدم قدم
کبھی بے مکاں، کبھی لا مکاں، میری آدھی عمر گزر گئ

تیرے وصل کی جو نوید ہے، وہ قریب ہے یا بعید ہے؟
مجھے کچھ خبر تو ہو جان جاں، میری آدھی عمر گزر گئ

کبھی مجھ کو فکر معاش ہے، کبھی آپ اپنی تلاش ہے
کوئی گُر بتا میرے نکتہ داں، میری آدھی عمر گزر گئ

کوئی طعنہ زن میری ذات پر، کوئی خندہ زن کسی بات پر
پہءِ دل نوازی دوستاں، میری آدھی عمر گزر گئ

ابھی وقت کچھ میرے پاس ہے، یہ خبر نہیں ہے قیاس ہے
کوئی کر گلہ میرے بد گماں، میری آدھی عمر گزر گئ

اُسے پا لیا، اُسے کھو دیا، کبھی ہنس دیا، کبھی رودیا
بڑی مختصر ہے یہ داستاں، میری آدھی عمر گزر گئ

تیری ہر دلیل بہت بجا، مگر انتظار بھی تھا کُجا
میری بات سن میرے رازداں، میری آدھی عمر گزر گئ

کہاں کائنات میں گھر کروں، میں یہ جان لوں تو سفر کروں
اسی سوچ میں تھا نا گہاں، میری آدھی عمر گزر گئ