Seekh Lo Ge



اکیلے پن کی اذیتوں کو شمار کرنا بھی سیکھ لو گے
کرو گے الفت تو روز جینا یہ روز مرنا بھی سیکھ لو گے

کوئی ارادہ ابھی تخیل میں پھول بن کے مہک رہا ہے
جب آسماں نے مزاج بدلا تو پھر بکھرنا بھی سیکھ لو گے

محبتوں کے یہ سارے رستے ہی سہل لگتے ہیں ابتدا میں
تم آج چل تو رہے ہو لیکن کہیں ٹھہرنا بھی سیکھ لو گے

کسی خلش سے فریب کھا کر تم اپنے جیون کے راستوں سے
نظر بدلتی ہوئی رتوں کی طرح گزرنا بھی سیکھ لو گے

خمارِ قربت کے خود فراموش موسموں میں یونہی اچانک
تم اپنی ہستی کی جان پہچان سے مکرنا بھی سیکھ لو گے

یہ وصل کا بے ثبات موسم جدائیوں کو صدائیں دے گا
حسن ذرا دیر زندہ رہنے کے بعد مرنا بھی سیکھ لو گے


 

Akele pan ki aziyyaton ko shumaar karna bhi seekh lo ge
Karo ge ulfat to roz jeena yeh roz marna bhi seekh lo ge

Koi irada abhi takhayyul main phool ban ke mehek raha hai
Jab aasman ne mizaj badla to phir bikharna bhi seekh lo ge

Mohabbaton ke ke yeh sarey rastey hi sehel lagte hain ibtida main
Tum aj chal to rahey ho lekin kahin thehrna bhi seekh lo ge

Kisi khalish se faraib kha kar tum apne jeevan ke raaston se
Nazar badalti hui ruton ki tarah guzarna bhi seekh lo ge

Khumar-e-qurbat ke khud-faramosh mausmon main yunhi achanak
Tum apni hasti ki jaab pehchan se mukarna bhi seekh lo ge

Yeh wasl ka be-sabaat mausam jidaiyon ko sadayen de ga
HASAN zara der zinda rehne ke baad marna bhi seekh lo ge


Advertisements

Tum hi tum


محبت اوڑھ کر میں خوشنما ہوں
تم ہی تم ہو بتاو میں کہاں ہوں ♥

—————————————-
Muhabat oorh kar main khushnuma hoon.
Tum hi tum ho batao main kahan hoon!! ♥

Wada-e-Hoor Per Behlaye hue

 

Wada-e-Hoor Pe Behlaye Hue Log Hain Hum
Khak Bolein Ge K Dafnaaye Hue Log Hain Hum

Yun Har Ek Zulm Pe Dam Sadhe Kharre Hain
Jese Diwar Mein Chunwaye Huye Log Hain Hum

Us Ki Har Baat Pe Labaik Bahla Kyon Na Kahein?
Zar Ki Jhnkaar Pe Bulwaye Huye Log Hain Hum

Jis Ka Ji Chahe Wo Ungli Pe Nacha Leta Hai
Jese Bazar Se Mangwaye Hue Log Hain Hum

Hansi Aye Bhi To Hanste Hue Dar Lagta Hai
Zindagi Yun Tere Zakhmaaye Hue Log Hain Hum

Asman Apna, Zameen Apni, Na Sans Apni, To Phir?
Jane Kis Baat Pe Itraye Hue Log Hain Hum?

Jis Tarha Chahe Bana Le Hamain Ye Waqt ~Qateel~
Dard ki Anch pe Pighlaaye Hue Log Hain Hum.

 

دستور


سنا ہے جنگلوں کا بھی کوئی دستور ہوتا ہے
سنا ہے شیر کا جب پیٹ بھر جائے
تو وہ حملہ نہیں کرتا
سنا ہے جب کسی ندی کے پانی میں
بئے کے گھونسلے کا گندمی سایہ لرزتا ہے
تو ندی کی روپہلی مچھلیاں اس کو
پڑوسی مان لیتی ہیں
ہوا کے تیز جھونکے جب درختوں کو ہلاتے ہیں
تو مینا اپنے گھر کو بھول کر
کوے کے انڈوں کو پروں میں تھام لیتی ہے
سارا جنگل جاگ جاتا ہے
ندی میں باڑ آجائے
کوئی پل ٹوٹ جائے
تو کسی لکڑی کے تختے پر
گلہری سانپ چیتا اور بکری
ساتھ ہوتے ہیں
سنا ہے جنگلوں کا بھی کوئی دستور ہے
خداوندا جلیل و معتبر، دانا و بینا منصف اکبر
ہمارے شہر میں اب
جنگلوں کا ہی کوئی دستور نافذ کر

شاعرہ: زہرہ نگار

Mohabbat Ik Samandar Hai


محبت اِک سمندر ہے ، ذِرا سے دِل کے اَندر ہے
ذِرا سے دِل کے اَندر ہے مگر پورا سمندر ہے

محبت رات کی رانی کا ، ہلکا سرد جھونکا ہے
محبت تتلیوں کا ، گُل کو چھُو لینے کا منظر ہے

محبت باغباں کے ہاتھ کی مِٹّی کو کہتے ہیں
رُخِ گُل کے مطابق خاک یہ سونے سے بہتر ہے

نہیں ترتیبِ آب و باد و خاک و آگ سے جیون
ظہورِ زِندگانی کو ، محبت اَصل عُنصر ہے

کوئی دُنیا میں نہ بھی ہو ، محبت لیتا دیتا ہے
بدن سے ماوَرائی ہے ، محبت رُوح پرور ہے

جہانِ نو ، جسے محبوب کی آنکھوں کا حاصل ہو
فقیہہِ عشق کے فتوے کی رُو سے وُہ سکندر ہے

محبت ہے رَمی شک پر ، محبت طوفِ محبوبی
صفا ، مروہ نے سمجھایا ، محبت حجِ اَکبر ہے

محبت جوئے شیرِ کُن ، محبت سلسبیلِ حق
محبت اَبرِ رَحمت ہے ، محبت حوضِ کوثر ہے

اَگر تم لوٹنا چاہو ، سفینہ اِس کو کر لینا
اَگر تم ڈُوبنا چاہو ، محبت اِک سمندر ہے

سنو شہزاد قیس آخر ، سبھی کچھ مٹنے والا ہے
مگر اِک ذات جو مشکِ محبت سے معطر ہے

(شاعر: شہزاد قیس)