Koi shaam Aisi Bhi Shaam Ho



کوئی شام ایسی بھی شام ہو، کہ ہو صرف میرے ہی نام سے
میرے سامعیں ہوں شگفتہ دل میرے دل گداز کلام سے

میری گفتگو کے گلاب سے ہو دلوں میں ایسی شگفتگی
کوئی ایسی نکہتِ خاص ہو، کہ مہک اُٹھیں در و بام سے

کوئی رنگ ان میں میں کیا بھروں، انہیں یاد رکھ کہ بھی کیا کروں
یہ جو بھیڑ بھاڑ میں شہر کی، مجھے لوگ ملتے ہیں عام سے
میری رات میری حبیب ہے، یہ بڑی عجیب و غریب ہے
میرے ساتھ چھوڑ دیا کرو، میرے فَن سے میرے کلام سے
 
میری آرزو ہے کہ موم ہوں کبھی اُن کے دِل بھی میرے لیۓ
جنہیں بیر ہے میری ذات سے، جو ہیں بَد گماں میرے نام سے
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Koi sham aisi bhi sham ho, k ho sirf meray hi naam se. .
Meray sama’een hon shugufta dil, meray dil-gudaaz kalaam se. .


Meri guftugu k gulaab se ho dilo’n mein aisi shuguftagi. .
Koi aisi nik’hat-e-khaas ho k mehek uthey dar-o-baam se. .


Koi rung in mein kia bharu’n? Inhein yaad rakh k bhi kia karun?
Ye jo bheerh bhaarh mein sheher ki, Mujhy log miltay hain aam se. .


Meri raat meri habeeb hai, ye barri ajeeb-o-ghareeb hai. .
Mery sath chorr diya karo, mery fann se meray kalaam se. .


Meri aarzu hai k moum hon kabhi un k dil bhi mery liye. .
Jinhain bair hai meri zaat se, Jo hain bad-gumaa’n mery naam se. !
Advertisements

Sada Ki Be Yaqeeni

ﮨﺠﻮﻡِ ﻏﻢ ﺳﮯ ﺟﺲ ﺩﻡ ﺁﺩﻣﯽ ﮔﮭﺒﺮﺍ ﺳﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ
ﺗﻮ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﯿﮟ
ﺍُﺳﮯ ﺁﻭﺍﺯ ﭘﺮ ﻗﺎﺑﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ
ﻭﮦ ﺍِﺗﻨﮯ ﺯﻭﺭ ﺳﮯ ﻓﺮﯾﺎﺩ ﮐﺮﺗﺎ ، ﭼﯿﺨﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﻠﺒﻼﺗﺎ ﮨﮯ
ﮐﮧ ﺟﯿﺴﮯ ﻭﮦ ﺯﻣﯿﮟ ﭘﺮ ﺍﻭﺭ ﺧُﺪﺍ ﮨﻮ ﺁﺳﻤﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﻣﮕﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ
ﮐﮧ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﭼﯿﺦ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﮐﮯ ﺭُﮐﻨﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ
ﺧُﺪﺍ ﮐﭽﮫ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﺳﮯ
ﺍﻭﺭ ﺍِﺱ ﻗﺪﺭ ﺭﺣﻤﺖ ﺑﮭﺮﯼ ﻣُﺴﮑﺎﻥ ﺳﮯ
ﺍُﺱ ﮐﻮ ﺗﮭﭙﮑﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﺍُﺱ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺳُﻨﺘﺎ ﮨﮯ
ﮐﮧ ﻓﺮﯾﺎﺩﯼ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﭼﯿﺦ ﮐﯽ ﺷِﺪّﺕ
ﺻﺪﺍ ﮐﯽ ﺑﮯ ﯾﻘﯿﻨﯽ ﭘﺮ ﻧﺪﺍﻣﺖ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﮯ…….!

Zaroorat aur Tamanna



ضرورت اور تمنا میں بہت سے فرق ہوتے ہیں
ضرورت کی یہی تفہیم کافی ہے
کہ یہ ایسی طلب ہے جو نہ پوری ہو
تو کوئی جی نہیں سکتا
تمنا اس کو کہتے ہیں کہ مٹ جایے
تو جینا چاہنا ممکن نہیں رہتا
ضرورت قادر مطلق نے اپنے دست قدرت سے
ہمیں مجبور رکھنے کو ہماری ذات میں رکھی
تمنا اختیار آدمی کہیے
جسے انسان کی اپنی رضا ایجاد کرتی ہے
ضرورت خواہ کسی ہو
مگر اس کے لئے” تعیّن ” شرط لازم ہے
تمنا کی وضاحت ہو نہیں سکتی
حدیث آرزو کی ساری تفسیریں ادھوری ہیں
ضرورت شکل رکھتی ہے
تمنا کی بھلا کب کوئی صورت ہے
تو اے جان تمنا ، اب کہاں تیری ضرورت ہے

Roshni Ke Waastey


روشنی کے واسطے ,  پندار کا سودا نہ کر
سامنے سورج بھی ہے تو اس کو ٹھوکر مار دے

عباس تابش
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Roshni Ke Waastey Pindaar Ka Sauda Na Kar
Saamney Suraj Bhi Hai To Us Ko Thokar Maar De

Abbas Tabish

Din Raat


چہرے سجے سجے ہیں تو دل ہیں بُجھے بُجھے
ہر شخص میں تضاد ہے دن رات کی طرح
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Chehrey Sajey Sajey Hain To Dil Hain Bujhey Bujhey
Har Shakhas Main Tazaad Hai Din Raat Ki Tarha ..!